Poetry

Masoom Bacchi (معصوم بچی)

Masoom Bacchi

Aao baithein zara kuch kaam karein
Insaniyat ke naam ye ek paigham karein
Izzat mao behno ki looti ja chuki hai bahut
Na bhare zakhm par marham tu zara aam karein
Imaan gar na becha ho abhi tak tumne
Rooh ka sauda gar na kia ho tumne
Insaniyat kuch gar zinda ho abhi
Kyun na usko zaalim sare aam kahein
Mera desh subah sham poojta hai jinhein
Kabhi Devi kabhi Maata manta hai jinhein
Wo aansu wo cheekhein kyun sunta nahi hai
Kya wo beti aurat insaan nahin hai
Ae zamaane tu dekh raha hai har pal
Tujhko maloom hai majroh dilo ki hal chal
Muddai bhi munsif bhi wahi hai ab to
Kyun na usi ke naam qatle aam kare
Beti bachegi tabhi tu padhegi
Tu hai naari dushman ye naari kahegi
Sun le hukumat in aawazo ko warna
Bahut  jaldi teri bhi arthi uthegi
Ye Mandir ye Masjid mein uljha naa humko
Ye Mulla ye Pandit se behla naa humko
Hum tujhse nahi tu hum se hai sun le
Is tadapte mulk ki kuch khabar le
Ye Maein ye behnein jo ab ro rahi hai
Tabahi ka teri saaman kar rahi hai
Ye bachcha ye ladka ye ladki uthe
Aur is zulm ka chakka jaam karein.

– Asif Malik Ibrahim
B.A Eng. Hons. , Jamia Millia Islamia

معصوم بچی

آو بیٹھے ذرا کچھ کام کرے
انسانیت کے نام یہ ایک پیغام کرے
عزت ماءوں بہنوں کی لوٹی جا چکی ہے بہت
نہ بھرے زخم پر مرہم تو ذرا عام کرے
ایمان گر نہ بیچا ہو ابھی تک تم نے
روح کا سودا گر نہ کیا ہو تم نے
انسانیت گر کچھ زندہ ہو ابھی
کیوں نہ اسکو ظالم سر عام کہے
میرا دیش صبح شام پوجتا ہے جنہیں
کبھی دیوی کبھی ماتا مانتا ہے جنہیں
وہ آنسو وہ چیخیں کیوں سنتا نہیں ہے
کیا وہ بیٹی وہ عورت انسان نہیں ہے
اے زمانے تو دیکھ رہاہےہر پل
تجھکو معلوم ہے مجروح دلوں کی ہل چل
مدعی بھی منصف بھی وہی ہے اب تو
کیوں نہ اسی کے نام قتل عام کرے
بیٹی بچیگی تبھی تو پڑھیگی
تو ہے ناری دشمن یہ ناری کہیگی
سن لے حکومت ان آوازوں کو ورنہ
بھت جلدی تیری بھی ارتھی اٹھے گی
یہ مندر یہ مسجد میں الجھا نہ ہمکو
یہ ملا یہ پنڈت سے بہلا نہ ہم کو
ہم تجھسے نہیں تو ہم سے ہے سن لے
اس تڑپتے ملک کی کچھ خبر لے
یہ مائیں یہ بہنیں جو اب رو رہی ہے
تبا ہی کا تیری سا ما ں کر رہی ہے
یہ بچہ یہ لڑکا یہ لڑکی اٹھے
اور اس ظلم کا چکا جام کرے
آوء بیٹھے ذرا کچھ کام کرے
انسانیت کے نام یہ ایک پیغام کرے
عزت ماں بہنوں کی لوٹی جا چکی ہے بہت
نہ بھرے زخم پر مرھم تو ذرا عام کرے

آصف ملک

 بی اے انگلش آنرس جامعہ ملیہ اسلامیہ   

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.